ساس بہو


راحیلہ ساجد

بہو رانی آپ بھی ذرا سيدھی ہو کر بيٹھيں اور دھيان سے ميری بات سنيں۔ 

جيسے بيٹے کی شادی اور نئی بہو لانے کے بعد ساس کے کچھ فرائض ہیں ، بالکل اسی طرح اس نۓ گھر ميں آنے کے بعد آپ کے بھی کچھ فرائض ہيں ۔ جوادا کرنے کے بعد آپ کو آئندہ زندگی ميں بہت سکون اور اطمينان دے سکتے ہيں۔ 

آپ نۓ گھر ميں قدم رکھتی ہيں تو يہ سوچ کرمت رکھيے گا کہ يہاں ميں شہزادی بن کر آئی ہوں اور جو کچھ ميں ماں باپ کے گھر نہيں کر سکی يہاں آزادی سے کر سکوں گی ۔ يہ گھر جہاں آپ دلہن بن کر آئی ہيں فی الحال آپ کا نہيں آپ کے ساس ، سسر، نندوں ، ديور کا ہے جہاں وہ سالہا سال سے رہ رہے ہيں اور آپ کو اسے اپنا بنانے ميں کافی محنت کرنی پڑے گی جس ميں صبر اور برداشت سب سے اہم ہتھيار ہے ۔ 

شادی کے ابتدائی دن بہت يادگار ہوتے ہيں ۔ مياں بيوی ہمہ وقت ساتھ رہنا چاہتے ہيں ، گھومنا ، پھرنا، دعوتيں اور دنيا جہاں کی باتيں کرتے وقت کا پتہ ہی نہيں چلتا ۔ سب آنے والی کے لاڈ اٹھاتے ہيں۔ يہاں پر دلہن رانی کو يہ بات بالکل نہيں بھولنی چاہيے کہ يہ خاطر مدارات صرف چند دن کی ہيں جونہی زندگی اپنے پرانے ڈھب پر واپس ائی تو روزمرہ کے تقاضے کچھ اور ہوں گے ۔ 

چليے شادی کے پندرہ دن آرام کر ليا ، تھوڑے ہيں ؟ اچھا اچھا ايک ماہ آرام کر ليں اور اس کے بعد اس سپنے سے جاگ جائيں جو آپ رسالوں ، ڈائجسٹوں ميں پڑھ کرآئی ہيں ۔  سب سے پہلے تو سيل فون کو سائيڈ پر رکھيں ، ہر وقت تسبيح کی طرح ہاتھ ميں اٹھا کرپھرنے کی کيا ضرورت ہے ۔ اگر آپ کی نند اور ديور ايسا کرتے ہيں تو کرنے ديجيے ان کا کيا کسی کو نظر نہيں آۓ گا ليکن آپ کی ايک چھوٹی سے چھوٹی بات بھی نوٹ کی جاۓ گی ۔ مياں کے کام تو شايد آپ ہنسی خوشی کر ليتی ہوں گی مگر اب گھر کے کاموں کی بھی باری ہے ۔ نہيں نہيں بھئی ذمہداری لينے کی بات کون کر رہا ہے ، بس تھوڑی دلچسپی دکھانی شروع کريں ۔ ساس يا نند کچن ميں ہوں تو پاس جا کر کھڑی ہو جائيں اور کوشش کريں کہ کچھ مدد کرديں ۔ کھانا بن جاۓ تو کچن سميٹنے ميں مدد کريں ۔ کھانا لگاتے وقت برتن لگا ديے ، کھانے سے فارغ ہو کر برتن سميٹ ليے ۔ ميز صاف کر ديا۔ اگر کوئی برتن دھونے کھڑا ہو گيا ہے تو اسے اکيلے چھوڑ کر دوسرے کمرے ميں جا کر نہ بيٹھ جائيں بلکہ اس کے ہاتھ سے برتن لے لے کرخشک کرنے والے ريک ميں رکھتی جائيں ۔ چاۓ بناتے وقت پيالياں نکال کر ٹرے ميں لگا ديں ۔ غرض يہ کہ کچن ميں موجود رہ کر اپنی موجودگی کا احساس دلائيں ۔ آہستہ آہستہ شام کی چاۓ اپنے ذمے لے ليں ۔ اس سے گھر والوں پر اچھا اثر پڑؑے گا۔ 

اسی طرح صفائی ستھرائی کے وقت فرنيچر کی جھاڑ پونچھ اپنے ذمے لے ليں ۔ اگر ماسی آتی ہے تو اس سے کام کروانے کا ذمہ اپنے سر لے ليں ۔ يہ سب اس ليے کہ اس کی اميد آپ سے کی جاتی ہے کہ آنے والی گھر سنبھالے گی ۔ اس ميں کوئی برائی بھی نہيں اور نہ ہی کوئی غلط بات ہے ، ہاں آتے ہی ساری ذمہ داری نئی دلہن کے سر ڈال دينا غلط ہے يا نئی دلہن کا بالکل سائيڈ پر رہنا غلط ہے ۔ 

اب آتے ہيں رويوں کی طرف ۔ ايک ماں اپنے بيٹوں کے بارے ميں بہت حساس ہوتی ہے۔ اس نے اسے 25، 26 سال ہر وقت اپنے ساتھ اپنے پاس ديکھا ہوتا ہے ۔ يہ مرحلہ اس کے ليے کافی مشکل ہوتا ہے جب اسے اپنا بيٹا بانٹنا پڑتا ہے ۔ نئی دلہن ہونے کے ناطے يقينا" آپ کا دل چاہتا ہو گا کہ ميرا مياں ہر وقت ميرے ساتھ رہے ليکن يہ مت بھوليے کہ وہ بيٹا بھی ہے اور بھائی بھی ۔ کل تک وہ ان سب کے ساتھ تھا اب اچانک وہ ان سے دور ہو گا تو کس پر حرف آۓ گا ؟ جی ، آپ پر ۔۔۔ کيا يہ بہتر نہيں کہ آپ اپنے شوہر کو تھوڑی جگہ ديں کہ وہ اپنا کچھ وقت اپنے گھر والوں کے ساتھ بھی گزارے بلکہ اگر آپ ساتھ شامل ہو جائيں تو گھر والوں پر زيادہ اچھا اثر پڑے گا۔ 

ساس نے اس گھر کو اپنے ڈھب سے کئی سال چلايا۔ آپ آج آئی ہيں ، ايک دم سے اسے بدلنے کی کوشش مت کيجيے ۔ اگر ساس تھوڑے سخت مزاج کی ہيں تو تو بالکل بھی نہيں ۔ گھر کو اسی طرح چلنے ديجيے اورخود کو بھی يہ سمجھا ليجيے کہ مجھے مقابلہ نہيں کرنا بلکہ جگہ بنانی ہے ۔ اگر گھر کے کچھ اصول ہيں توشروع ميں بغير کسی بحث اور تنقيد کے انہيں فالو کيجيے ۔ ہمارے گھر ميں تو ايسے ہوتا تھا، اور ايسے نہيں ہوتا تھا کی گردان ساس ، نند کے تيور چڑھا سکتی ہے ۔ اگر ساس يا ننديں آپ کوکچھ سخت بول جائيں ( کيونکہ برداشت وہاں بھی کم ہی ہوتی ہے ) توآپ گھر کے سکون کی خاطر وقتی طور پر خاموشی اختيار کر ليں، ضروری نہيں کہ جوابی کاروائی کريں ، امی کو فون کر کے حرف بحرف اطلاع گھر پہنچائيں اور نہ ہی شام کو مياں کے گھر آنے کے بعد اس کے کان بھريں ۔ بلکہ جب گھنٹے دو بعد گھر کا ماحول سازگار ہو جاۓ تو آرام سے ساس سے بات کريں کہ ميرا مطلب ايسے نہيں تھا يا ميں ايسے کرنا چاہتی تھی ۔

 يہ بات سمجھنی بہت ضروری ہے کہ نئی جنريشن آؤٹ سپوکن ہونے کو اپنی بہت بڑی خوبی گردانتی ہے ليکن وہ يہ نہيں جانتی کہ بہت سے مسائل اسی آؤٹ سپوکن ہونے کی وجہ سے ہی پيدا ہوتے ہيں ۔ اگر آپ فورا" ترکی بہ ترکی جواب نہ ديں اور بعد ميں ارام سے بات کليئر کر ليں تو شايد حالات اتنے خراب نہ ہوں ۔ 

ارے ہاں ، گھر ميں سرف ساس ہی تو نہيں نا ، ننديں بھی ہيں ۔ جن نندوں کی شادی ہو گئی ، وہ تو زيادہ تر اپنے گھر ميں ہوتی ہيں ، جب آئيں تو انہيں مہمان سمجھيں اور کی خاطر مدارات کريں تا کہ انہيں اپنی اہميت کا احساس ہو ۔ جو ننديں گھر ميں ہوں ان سے مقابلہ مت کيجيے کہ وہ گھر کا کام نہيں کرتی تو ميں کيوں کروں ۔ آج نہيں ، کل ، سال بعد ، دو سال بعد وہ بھی اس گھر سے چلی جائيں گی ، يہاں کون رہے گا ؟ آپ ۔۔ تو گھر تو آپ کا ہوا نا ۔ ساس کے ساتھ ساتھ ذمہ داری آپ سنبھالنے کی کوشش کريں اور نند کو صرف مدد کے ليے ساتھ لگائيں ۔ اس سے دوستانہ تعلق رکھيں۔ اگر وہ سخت بول بھی جاۓ تو نظر انداز کر نے کی کوشش کريں ۔ اس کی سکول ، کالج لائف کے بارے ميں دلچسپی ظاہر کريں ، آپ اپنے تعلقات کو بہت بہتر ہوتا محسوس کريں گی ۔ 

سسر اور ديور گھر کے اہم ارکان ہيں ليکن عموما" بہو کی اپنے سسر سے اور بھابھی کی اپنے ديوروں سے اچھی نبھتی ہے ۔ اس کی وجہ يہ ہوتی ہے کہ گھرداری ان لوگوں کے ذمے نہيں ہوتی اس ليے بہو يا بھابھی ان کی راجدھانی ميں کوئی گڑ بڑ نہيں کرتی بلکہ انہيں اپنی بيگم ، بيٹی ، ماں اور بہنوں کے ساتھ حدمت کے ليے ايک نيا بندہ مل جاتا ہے تو وہ کوئی اعتراض کيوں کريں گے بھلا :-) مذاق برطرف بہت کم سسر يا ديور ايسے ہوتے ہيں جن کو نۓ آنے والی سے کوئی مسئلہ بنتا ہے ۔ اس ليے اس موضوع کو ہم زيادہ نہيں چھيڑتے۔ 

آج کل سيل فون ، انسٹاگرام ، فيس بک اور ٹوئٹر نے ہر ايک کو اپنے سحر ميں جکڑ رکھا ہے ۔ سب سے ہی درخواست ہے ليکن بہنوں بچيوں سے خاص طور پر درخواست کرتی ہوں کہ خدا کے ليے اس سيل فون کے ليے دن ميں کوئی ايک گھنٹہ ، دو گھنٹے مخصوص کر ليں ۔ ہر وقت ہر جگہ ، کھانے کی ميز پر ، کچن ميں ، مہمانوں کے سامنے ڈرائنگ روم ميں ساتھ لے لے کر پھرنا اور پھر اس ميں مصروف رہنا کسی طور درست نہيں ۔ خاص طور پر نئی شادی شدہ بہنوں ، بيٹيوں کو اس سلسلے ميں تھوڑے رکھ رکھاؤ کا مظاہرہ کرنے کی اشد ضرورت ہے ۔ موبائل پر ہر وقت اپنے امی ، ابو، بہن بھائيوں اور سہيليوں سے گپيں لگانا درست نہيں ۔ اسی طرح فيس بک کا ہر وقت استعمال بھی آپ کی توجہ بٹا ديتا ہے۔  آپ نۓ گھر ميں ائی ہيں ، يہاں کے رہنے والے آپ کی توجہ کے مستحق ہيں ۔ جب آپ اپنے کمرے ميں ہوں تو اپنا وقت جيسے چاہيں استعمال کريں ليکن سب کے درمياں بيٹھی ہوں تو سب کو وقت ديں ، سيل کو نہيں ۔

يہ موضوع اتنا لمبا ہے کہ اس پر اس سے دگنی لمبی تحرير لکھی جا سکتی ہے ليکن تھوڑے کو بہت جانيے گا۔ کيونکہ حقوق کی گردان تب اچھی لگتی ہے جب آپ اپنے فرائض مکمل طور پر ادا کر رہے ہوں ۔ شروع کے دو تين سال صبر اور برداشت کے ساتھ گزار لينے سے اکثر بچيوں کی بقيہ زندگی بہت پرسکون گزرتی ہے ۔ 


2019-06-28 17:26:15
Read More


Most speedy service ever we seen.

I was looking for a suitable match for my 19 years old daughter. Signed up after reading an advertisement in “Khawateen ka Islam“. Just with in a month we found the desired one and Nikah was held .....Read More


سادگی سے نکاح ہوتا کیا ہے؟

سادگی سے نکاح کیا ہے؟ عام طور پر جہیز کے بغیر نکاح کو سادہ نکاح سمجھا جاتا ہے جب بھی سادگی سے نکاح کی بات کی جات.....Read More


میکے سے محبت اور اپنا گھر

  تحریر : جویریہ سعید اس پر اکثر بات کی جاتی ہے کہ مرد حضرات کی سخت مزاجی اور پابندیوں کی وجہ سے ناصرف عورت بل.....Read More


رمضان آفر

سمپل نکاح کا روز اول سے مقصد اپنے ممبرز کو بہترین سہولیات دینا ہے۔ اسی مقصد کو پیش نظر رکھتے ہوئے ہم لے کر آئے ہ.....Read More


آن لائن رشتہ ڈھونڈنا کیسا ہے؟

پاکستان میں رشتہ ڈھونڈنے کے لیے روایتی طور پر مقامی افراد کی خدمات لی جاتی ہیں۔ لڑکے لڑکی کا نکاح کے لیے براہ ر.....Read More


سادگی سے نکاح کر تو لیا لیکن۔۔۔

ہماری نوجوان نسل دکھاوے اور جھوٹی انا کی دلدل سے نکلنے کے لیے سو فیصد آمادہ ہے لیکن ہمارے بزرگ راستے کا پتھر ثا.....Read More


وعدہ

صادق و امین کا وعدہ۔ نکاح سادہ تو برکت ذیادہ.....Read More